Chitral Nama News Details

   

Back to Home Page

زخمی بھیڑیا ابتدائی طبی امدادکے بعد پشاور ریفر

 چترال(بشیر حسین آزاد)محکمہ وائلڈ لائف کی طرف سے جاری ایک پریس ریلیز میں گذشتہ روز زئیت (کالک) کے مقام پر برآمد شدہ زخمی بھڑیا کی علا ج کی تفصیل بتاتے ہوئے کہا گیا ہے کہ 31 اکتوبر 2019 کو ڈویژنل فارسٹ آفیسر وائلڈ لائف چترال محمد ادریس ایس ڈی ایف او وائلڈ لائف چترال الطاف علی شاہ کے ساتھ شندور جارہے تھے کہ زئیت (کالک) میں ایک زخمی بھوری رنگ کا بھیڑیا دیکھا۔ ابتدائی طور پر بھیڑیا کا معائنہ کرنے کے بعد رینج آفیسر وائلڈ لائف بونی کو بھیڑیا کو ویٹرنری ہسپتال بونی منتقل کرنے کے لئے بلایا گیا، ڈی ایف او نے بونی کے وائلڈ لائف عملے کو ریسکیو کی ہدایت کی۔ زخمی بھیڑیا کو باحفاظت بونی کے ویٹرنری اسپتال منتقل کیا گیا۔ جہاں بھیڑیے کو ابتدائی طبی امداد دی گئی اور ویٹرنری ہسپتال بونی کے انچارج نے محکمہ وائلڈ لائف کو مشورہ دیا کہ بونی میں ضروری سہولت کی عدم موجودگی کی وجہ سے اسے مزید علاج کے لئے سول ویٹرنری ہسپتال چترال منتقل کیا جائے۔ 31 اکتوبر 2019 کو رات گیارہ بجے بھیڑیا کو سول ویٹرنری ہسپتال چترال پہنچایا گیا جہاں ڈاکٹر شیخ احمد ایس وی او نے بھیڑیا کو ابتدائی طبی امداد دی اور مکمل علاج اور طریقہ کار کے لئے اسے دوبارہ صبح لانے کو کہا۔ یکم نومبر کو وائلڈ لائف کے عملے نے اسے دوبارہ ہسپتال لے گئے جہاں ڈاکٹر نے اس کا علاج کرتے ہوئے زخمی آنکھ کا اپریشن کیا اور بھیڑیا کے زخمی ٹانگ کی بھی پٹی کی اور مزید علاج کے لئے پشاور ریفر کیا۔
 

قاری فیض اللہ پوزیشن ہولڈرز کے انعامات

چترال(نذیرحسین شاہ نذیر) مدرسہ امام محمد کراچی کے مہتمم اور چترال کی معروف دینی اور سماجی شخصیت قاری فیض اللہ کی طرف سے ضلع چترال میں میٹرک کے امتحان میں نمایان پوزیشن حاصل کرنے والے طلباء و طالبات کو نقد انعام اور شیلڈ دینے کی تقریب کا اہتمام ہوا۔جس میں ڈپٹی کمشنر چترال نویداحمدمہمان خصوصی تھے تقریب میں ای ڈی اوفیمل حلیمہ بی بی سمیت ضلع بھر سے ماہرین تعلیم، سیاسی وسماجی شخصیات اوراساتذہ کی کثیر تعداد شریک ہوئے۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے ڈی سی چترال نویداحمدنے معیاری تعلیم کی اہمیت بیان کرتے ہوئے کہاکہ قوموں کی ترقی کے لئے یہ نقطہ آغاز ہے اور معیاری تعلیم کے منزل کے حصول کے لئے حکومت اور تعلیمی اداروں کے ساتھ سول سوسائٹی کا بھی ایک کردار متعین ہے جسے ادا کرنے کی کئی صورتیں ہیں اور طلباء وطالبات کی حوصلہ افزائی کے ایسے سلسلے ان کا حصہ ہیں جوکہ چترال میں قاری فیض اللہ نبھارہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ جن طلباء وطالبات کواقراء ایورڈ نہیں ملاہے اُنہیں مایوس ہونے کی ضرورت نہیں خوب دل لگاکرمحنت کریں سلہ آپ کومل جائے گا۔
کنوینئر اور شاہی مسجد کے خطیب مولانا خلیق الزمان نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ اس سال مہنگائی کومددنظررکھتے ہوئے قاری فیض اللہ نے انعامات میں دس دس ہزار روپے بڑھاکر پہلی پوزیشن کی 40ہزارسے50ہزا،دوسری پوزیشن کی 30ہزار40ہزار،تیسری پوزیشن20ہزار30ہزارکالاش کمیونٹی کے پوزیشن ہولڈر کے لئے 10ہزارسے بڑھاکر20ہزارروپے مقررکیاگیا۔اس کے علاوہ مختلف شعبہ ہائے زندگی میں گران قدرخدمات کے اعتراف میں بھی حضرات کوبھی انعامات سے نوازگیاہے جن میں شعراء،ادباء،اورڈاکٹرشامل ہیں اسی سلسلے میں اس سال کھیل کے میدان میں بہترین پولوپلیئرشہزادہ سکندرالملک اوراظہارعلی کو بھی شیلڈ سے نوازاگیا۔انہوں نے کہاکہ قاری فیض اللہ چترالی نے قدرتی آفات میں چترال کے مختلف علاقوں میں بے شمارامدادی سامان تقسیم کئے ہیں حالیہ گولین میں قدرتی آفات سے متاثرین میں امدادی سامان کے ساتھ سولرسسٹم بھی تقسیم کیاگیا۔پروگرام سے مذہبی وسماجی شخصیات قاری جمال عبدالناصر،سماجی کارکن عنایت اللہ اسیر،چیئرمین روزہدایت اللہ،ڈئریکٹراسامہ وڑایچ اکیڈیمی فدالرحمن،قاری سلامت اللہ اوردیگرنے خطاب کیا۔
گورنمنٹ سکولوں میں ضلع بھرسے پہلی پوزیشن حاصل کرنے والے گورنمنٹ ہائی سکول ریشن کے ضیاء الابراربن سیدالابرارکو50ہزار،دوسری پوزیشن گورنمنٹ سینٹینل ہائی سکول چترال کے دانش بن حبیب الرحمن کو40ہزار،تیسری پوزیشن گورنمنٹ ہائی سکول کوغذی کے اسداللہ بن سعیداللہ30ہزار،پرائیویٹ سیکٹرمیں پہلی پوزیشن فرنٹیئرکورپبلک سکول چترال کے خلیق دادبن امان اللہ کو50ہزار،دوسری پوزیشن دی لینگ لینڈ سکول اینڈکالج چترال کے فرحین گل بنت گل محمدکو40ہزار،تیسری قتیبہ پبلک سکول چترال کے مہک افضل بنت افضل بیگ کو 30ہزاراورکالاش کمیونٹی سے گورنمنٹ ہائی سکول بمبوریت مست بیگم بنت وزیر کو20ہزارروپے نقدی شیلڈاورسرٹیفیکس کے ساتھ دیے گئے۔